امریکہ میں نسل پرستانہ فائرنگ کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک ہو گئے ہیں

Rate this item
(0 votes)
امریکہ میں نسل پرستانہ فائرنگ کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک ہو گئے ہیں

امریکی میڈیا نے اتوار کی صبح خبر دی ہے کہ ریاست نیویارک کے شہر "بھینس" میں اندھی فائرنگ کا واقعہ پیش آیا ہے۔

نیویارک پولیس کا کہنا ہے کہ ایک شخص جس نے خود کو "سفید بالادستی" کے طور پر شناخت کیا تھا، ایک سپر مارکیٹ میں فائرنگ شروع کر دی۔

امریکی میڈیا رپورٹس کے مطابق ابتدائی اطلاعات کے مطابق کم از کم نو افراد کو گولیاں ماری گئیں جن میں متعدد افراد کے سروں پر بھی گولیاں لگیں۔ دو متاثرین سٹور کے باہر زمین پر دم توڑ گئے اور کم از کم ایک شخص کو ڈسٹرکٹ ہسپتال لے جایا گیا۔

اسٹور کے اندر موجود افراد کی حالت ابھی تک معلوم نہیں ہے۔

شوٹر کی حالت کے بارے میں متضاد اطلاعات موصول ہوئی ہیں، کچھ میڈیا آؤٹ لیٹس نے کہا کہ وہ جائے وقوعہ پر ہی مارا گیا۔ بفیلو پولیس نے تاہم کہا کہ مشتبہ شخص کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور اس سے ایک نیم خودکار رائفل ضبط کر لی گئی ہے۔

حملہ آور نے شوٹنگ کو Twitch پر براہ راست نشر کیا، جس میں پرتشدد مناظر کے ریکارڈ شدہ اسکرین شاٹس دکھائے گئے، جن میں ایک خاتون کو ایک اسٹور کے باہر چہل قدمی کے دوران سر میں گولی ماری گئی تھی۔

اس نے انٹرنیٹ پر 106 صفحات پر مشتمل ایک آن لائن بیان بھی پوسٹ کیا، جس میں وضاحت کی گئی کہ اس کا محرک ایک "سازشی مفروضے" کی وجہ سے تھا کہ دوسری نسلیں گوروں کی جگہ لے رہی ہیں۔ دستاویز میں، اس کا کہنا ہے کہ اس کی عمر 18 سال ہے اور وہ خود کو سفید فام اور "یہود مخالف" کے طور پر بیان کرتا ہے۔

چند منٹ بعد، امریکی میڈیا نے بفیلو پولیس کے حوالے سے اطلاع دی کہ فائرنگ میں کم از کم 10 افراد مارے گئے۔

"یہ ایک ہارر فلم دیکھنے جیسا ہے، سوائے اس کے کہ سب کچھ حقیقی ہے،" بفیلو پولیس کے ایک اہلکار نے شوٹنگ کے مقام پر میڈیا کو بتایا۔ "یہ واقعی ایک apocalyptic منظر ہے!"

یو ایس آرمڈ وائلنس ریسرچ آرکائیو سے پتہ چلتا ہے کہ 2022 کے آغاز سے لے کر اب تک پورے امریکہ میں کم از کم 140 بڑے پیمانے پر فائرنگ کے واقعات ہو چکے ہیں۔ 

://www.taghribnews.

Read 77 times

Add comment


Security code
Refresh