مسجد مرمر؛ قاهره محل میں چمکتا نگینہ

Rate this item
(1 Vote)
مسجد مرمر؛ قاهره محل میں چمکتا نگینہ

 الاھزام نیوز کے مطابق مسجد محمدعلی قاہرہ کی معروف مساجد میں شمار کی جاتی ہے اور سنگ مرمر سے استفادے کی وجہ سے اس کو مسجد مرمر یا مسجد الابستر کے نام سے جانا جاتا ہے۔

 

 سال ۱۸۳۰ مصر جدید کے بانی عثمانی دور کے والی محمدعلی پاشا نے یوسف بوشناق جو مامور کیا

کی اس مسجد کی تعمیر کریں۔

 

تعمیر کی مسجد پر کام فورا شروع ہوا اور معماروں نے اپنے فن کا بھرپور مظاہرہ کیا جو مصری اور استنبول کے معمار تھے۔

اس مسجد کی تعمیر میں بیس سال کا عرصہ لگا۔

مسجد محمدعلی خاص طرز تعمیر کی شاہکار مسجد ہے جو اس کو مصر کی دیگر مساجد سے ممتاز کرتی ہے، اسکے دو مینار کی بلندی 84 میٹر ہیں، مسجد میں 365 چراغ ہیں جو سال کے دنوں کی تعداد کے برابر ہے اور اسی طرح چھلچراغ کے نام سے ایک اور شاہکار نورفشانی کا انتظام کیا گیا ہے۔/

 

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

مسجد محمدعلی جواهری بر فراز ارگ قاهره

 

Read 484 times