ایران کے خلاف نئی امریکی پابندیوں کے پس پردہ محرکات

Rate this item
(0 votes)
ایران کے خلاف نئی امریکی پابندیوں کے پس پردہ محرکات

اکثر سیاسی اور اقتصادی ماہرین کا خیال ہے کہ امریکہ کی جانب سے ایران کے خلاف عائد کی جانے والی نئی پابندیاں محض علامتی ہیں اور اب تک جو پابندیاں چلی آ رہی ہیں ان کی سختی اور افادیت میں کسی قسم کے اضافے کا باعث نہیں بنیں گی۔ لیکن اس کے باوجود امریکی حکام یہ ظاہر کرنے کیلئے ایڑی چوٹی کا زور لگا رہے ہیں کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے خلاف موجودہ پابندیاں نئی ہیں اور وہ تہران پر مزید اقتصادی دباو کا باعث بنیں گی۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس بارے میں ٹویٹر پر اپنے پیغام میں کہا ہے: "آج میں نے ایران کا جوہری پروگرام، بیلسٹک میزائل اور فوجی ٹیکنالوجی کو محدود کرنے کیلئے نئے اقدامات انجام دیے ہیں۔"
 
انہوں نے مزید لکھا: "میری حکومت ہر گز ایران کو جوہری ہتھیاروں تک رسائی یا بیلسٹک میزائلوں اور دیگر فوجی سازوسامان کے نئے ذخائر کے ذریعے باقی دنیا کو خطرے سے روبرو کرنے کی اجازت نہیں دے گی۔ میں نیا صدارتی حکم جاری کر کے ایران کے خلاف اقوام متحدہ کی پابندیوں کو دوبارہ فعال کر دوں گا اور نئی پابندیاں عائد کرنے، برآمدات کو کنٹرول کرنے اور جوہری سرگرمیوں سے مربوط 24 افراد اور اداروں کے خلاف پابندیاں لگا کر ایران پر مزید دباو ڈالوں گا۔" اسی طرح امریکہ کے وزیر دفاع مارک ایسپر نے کہا ہے: "وہ صدارتی حکم جو آج صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے خلاف نئی پابندیوں اور گذشتہ پابندیوں کے خود بخود دوبارہ فعال ہو جانے کی صورت میں جاری کیا ہے مددگار ثابت ہو گا۔"
 
مارک ایسپر نے مزید کہا: "یہ صدارتی حکم ایران کی جانب سے فوجی اسلحہ اور سازوسامان کی درآمد اور برآمد کو روک کر امریکہ، اس کے اتحادیوں، اس کے شرکاء کی فورسز اور شہریوں کی حفاظت کرے گا۔" امریکہ کی جانب سے ایران کے خلاف نئی پابندیاں عائد کرنے کا ایک مقصد ایران کے ساتھ جوہری معاہدے میں شریک دیگر مغربی ممالک اور دنیا کی تجارتی کمپنیوں کو خبردار کرنا ہو سکتا ہے تاکہ انہیں ایران کے ساتھ کسی قسم کے تجارتی لین دین خاص طور پر اسلحہ کی تجارت سے باز رکھا جا سکے۔ امریکہ کے وزیر خارجہ مائیک پمپئو نے بھی ایران کے خلاف پابندیوں اور ان کے ممکنہ نتائج کے بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا: "امریکہ میں بہت سی ایسی کمپنیاں موجود ہیں جو ایران کے ساتھ تجارت کرنے کی خواہاں ہیں۔"
 
امریکی وزیر خارجہ نے مزید کہا: "امریکہ اس بات کی اجازت نہیں دے گا کہ ایران کیلئے اسلحہ اور فوجی سازوسامان کی اسمگلنگ ممکن ہو سکے۔ لہذا ہم نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 2231 کا سہارا لیتے ہوئے یہ یقین حاصل کرنے کی کوشش کی ہے کہ ایران کو اسلحہ نہیں پہنچے گا۔ امریکہ اقوام متحدہ کی اس قرارداد پر عملدرآمد یقینی بنانے کیلئے بھرپور کردار ادا کرے گا۔ یہ پابندیاں دنیا بھر کی کمپنیوں کے خلاف ایک جیسی عائد کی جائیں گی۔ ہم اس بارے میں یقین حاصل کرنا چاہتے ہیں کہ ایران کو کسی قسم کا پیسہ اور دولت فراہم نہیں کیا جائے گا۔" لیکن یوں محسوس ہوتا ہے کہ امریکی حکام کی جانب سے شروع کی جانے والی اس نفسیاتی جنگ کے پیچھے کوئی اور محرکات کارفرما ہیں جنہیں وہ چھپانا چاہ رہے ہیں۔
 
امریکی حکام کے اس پروپیگنڈے کے پیچھے کارفرما محرکات درج ذیل ہیں:
1)۔ امریکہ میں صہیونی لابی کی سیاسی، میڈیا اور مالی حمایت حاصل کر کے درپیش صدارتی انتخابات میں اس کا فائدہ اٹھانا۔
2)۔ ایران کے خلاف جارحانہ انداز اپنا کر گذشتہ چار سالوں کے دوران خارجہ پالیسی میں ڈونلڈ ٹرمپ کی ناکامیوں پر پردہ ڈالنا۔ امریکہ کو ایران کے علاوہ چین، روس اور شمالی کوریا کے سامنے بھی شدید ناکامیوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ اس کے پیچھے بھی انتخابات میں کامیابی کا محرک کارفرما ہے۔
3)۔ ایرانی شہریوں کو نفسیاتی جنگ کا نشانہ بنا کر شدید اضطراب اور بے چینی کا شکار کرنا تاکہ ملک میں موجود اقتصادی بحران کی شدت میں مزید اضافہ ہو جائے۔ خاص طور جب ہم دیکھتے ہیں کہ ایران میں موجود اقتصادی مسائل کی بڑی وجہ نفسیاتی اسباب ہیں۔
 
روس نے واضح طور پر اعلان کیا ہے کہ امریکہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا کردار اپنے ہاتھ میں لینے کا کوئی حق نہیں رکھتا۔ روسی پارلیمنٹ دوما کی بین الاقوامی کمیٹی کے سربراہ لیونیڈ ایسلاٹسکے نے کہا: "بظاہر یوں دکھائی دیتا ہے کہ امریکی حکمران اوہام کا شکار ہیں اور خود کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل تصور کر رہے ہیں۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے رکن ممالک حتی امریکہ کے قریبی اتحادی ممالک بھی گذشتہ چند ماہ کے دوران واضح طور پر ایران کے خلاف امریکہ کے ناجائز مطالبات کو مسترد کر چکے ہیں۔" انہوں نے تحریر: عبدالرضا خلیلیکہا کہ امریکہ نے اپنے ان بچگانہ اقدامات کے ذریعے خود کو پوری عالمی برادری کے مقابلے میں لا کھڑا کیا ہے۔ لہذا یوں محسوس ہوتا ہے کہ امریکہ اسی شاخ کو کاٹنے میں مصروف ہے جس پر خود بھی بیٹھا ہوا ہے

Read 46 times

Add comment


Security code
Refresh